Wednesday , December 2 2020
wasi-shah

Wasi Shah Poetry For Whatsapp Status

Wasi Shah Poetry For Whatsapp Status In Urdu

Syed Wasi Shah (Urdu:سید وصی شاہ) is a Pakistani Urdu poet, dramatist, columnist, writer, anchor, and occasional actor. Wasi started his career by acting in his own-scripted serial, he left acting in order to pursue his career in poetry. … Born as Syed Wasi Shah in Sargodha, Punjab, Wasi has a Punjabi dialect.

Here You Can Enjoy Some Poetry of Syed Wasi Shah

Falak Pay Chand Kay Haaly Bhe Sogh Krty Hen
Jo Tou Nahi Tu Ujaly Bhe Sogh Krty Hen

فلک پے چاند کے حالے بھی سوگھ کرتے ہں
جو تو نہیں تواُجالے بھی سوگھ کرتے ہں

Tum Se Mohabbat Kar K Hum Bohot Pachta Rahe Hain
Kash Sazaa-E-Mohabbat Se Sazaa-E-Maut Achha Tha

تم سے محبت کر کے ہم بہت پچھتا رہے ہیں
کاش سزائے محبت سے سزائے موت اچھا تھا

Kab Nahin Naaz Uthaye Hain Tumhare Mai Ne
Dekho Aanchal Pe Sajaye Hain Sitare Mai Ne

کب نہیں ناز اُٹھائے ہیں تمہارے میں نے
دیکھو آنچل پے سجاے ہیں ستارے میں نے

H0ti H0 Gi Mere B0sey Ki Talab Mai Pagal
Jab Bhi Zulf0n Mai K0i Ph00l Sajaati H0 Gi

ہوتی ہوگی میرے بوسے کی طلب میں پاگل
جب بھی زلفوں میں کوئی پھول سجاتی ہوگی

Hijr Ka Taara Doob Chala Hai Dhalne Lagi Hai Raat Wasi
Katra Katra Baras Rahi Hai Ashkon Ki Barsaat Wasi

حجر کا تارا ڈوب چالا ہے ڈھلنے لگی ہے رات وصی
قطرہ قطرہ برس رہی ہے اشکوں کی برسات وصی

Udasiyon Se Wabasta Hai Yeh Zindagi Meri ‘WASI’
Khuda Gawaah Hai K Phir Bhi Tujhe Yaad Karte Hain

اداسیوں سے وابستہ ہے یہ زندگی میری وصی
خدا گواہ ہے کے پھر بھی تجھے یاد کرتے ہیں

Kon Kehta Hai K Maut Aayegi Aur Main Mar Jaoonga
Main To Dariya Hoon Samandar Main Uttr Jaoonga

کون کہتا ہے کے موت آے گی اور میں مر جاوّں گا
میں تو دریا ہوں سمندر میں اُتّر جاوّں گا

Dheeray Se Sarakti Hai Raat Us Ke Aanchal Ki Tarah
Uska Chehra Nazar Aata Hai Jheel Main Kanwal Ki Tarah

دھیرے سے سرکتی ہے رات اُس کے آنچل کی طرح
اُس کا چہرا نظر اتا ہے جھیل پیں کنول کی طرح

Nahi Hota Kisi Tabib Se Is Marz Ka Ilaaj Wasi
Ishq Laa Ilaaj Hai, Bas Parheez Kijiye

نہیں ھوتا کسی طبیب سے اس مرض کا علاج وصی
عـــشـــق لا عــلاج ھـــــے ، بس پــــرہــیــز کیجیے

Ye Jo Chehre Se Tumhen Lagte Hain Bimar Se Hum
Khob Roye Hain Lipat Kar Dar-O-Deewar Se Hum

یہ جو چہرے سے تمہیں لگتے ہیں بیمار سے ہم
خوب روئے ہیں لیپٹ کر در و دیوار سے ہم

Larkiyon Ke Dukh Ajab Hote Hain Sukh Us Se Ajeeb
Hans Rahi Hain Aur Kajal Bhejta Hai Sath Sath

لڑکیوں کے دکھ عجب ہوتے ہیں سکھ اس سے عجیب
ہنس رہی ہیں اور کاجل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ

Bas Ye Hua k Us Ne Takalluf Se Baat Ki
Aur Hum Ne Rote Rote Dupatte Bhigo Liye

بس یہ ہوا کہ اس نے تکلف سے بات کی
اور ہم نے روتے روتے دوپٹے بھگو لئے

Chunti Hain Mere Ashk Raaton Ki Bhikaranen
‘Mohsin’ Luta Raha Hoon Sar-e-Aam Chandni

چنتی ہیں میرے اشک رتوں کی بھکارنیں
محسنؔ لٹا رہا ہوں سر عام چاندنی

Palat K Aagai Kheme Ki Samt Pyas Meri
Phate Hue The Sabhi Badalon K Mashkize

پلٹ کے آ گئی خیمے کی سمت پیاس مری
پھٹے ہوئے تھے سبھی بادلوں کے مشکیزے

Jin Ashkon Ki Phiki Lao Ko Hum Bekar Samajhte The
Un Ashkon Se Kitna Roshan Ik Tarik Makaan Hua

جن اشکوں کی پھیکی لو کو ہم بے کار سمجھتے تھے
ان اشکوں سے کتنا روشن اک تاریک مکان ہوا

Read More – 

Mirza Ghalib Poetry in Urdu Love

Mir Taqi Mir poetry in Urdu

Mohsin Naqvi Best of Poetry 2 Line

About admin

I am the Owner of this Website. By profession, I am a Poet, Lyricist and Content Writer. Connect to me on Social Media.

Check Also

Bulleh-Shah-Poetry

Bulleh Shah Poetry

Bulleh Shah Poetry Baba Bulleh Shah was a Punjabi Islamic Poet and also a Sufi …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *