Monday , November 30 2020
mir-taqi-mir-poetry-in-urdu
Mir Taqi Mir Poetry

Mir Taqi Mir poetry in Urdu

Mir Taqi Mir poetry in Urdu

The major origin of knowledge on Mir’s life is his life story
Zikr-e-Mir, which covers the duration from his childhood to the beginning of his sojourn in Lucknow.

However, it is said to conceal more than it reveals, with material that is updated or presented in no chronological sequence. Therefore, many of the ‘true details’ of Mir’s life remain a matter of supposition.

Mir was born in Agra, India (then called Akbarabad and ruled by the Mughals) in August or February 1723.

His ideology of life was formed predominantly by his father, a religious man with a large following, whose significance on the importance of love and the value of sensitivity remained with Mir throughout his life and impregnate his poetry.

Mir’s father died while the poet was in his teens. He left Agra for Delhi a few years after his father’s death, to finish his education and also to find patrons who offered him pecuniary support (Mir’s many patrons and his relationship with them have been described by his glossator, C. M. Naim).

 

Aik Chai Ko Doh Kappon Mein Barabar Baant Kar,
Akser Kia Hai Farz Ke Tanha Nahi Hun Main

ایک چائے کو دو کپوں میں برابر بانٹ کر
اکثر کیا ہے فرض کے تنہا نہیں ہوں میں

Duniya Jalti Rahay,
Chai Chalti Rahay

دنیا جلتی رہے
چائے چلتی رہے

Jab Ke Pehlu Se Yaar Uthta Hai

Dard Be Ikhtiar Uthta Hai

 

Mir Taqi Mir complete Ghazal

پتا پتا بوٹا بوٹا حال ہمارا جانے ہے

پتا پتا بوٹا بوٹا حال ہمارا جانے ہے
جانے نہ جانے گل ہی نہ جانے باغ تو سارا جانے ہے

لگنے نہ دے بس ہو تو اس کے گوہر گوش کو بالے تک
اس کو فلک چشم مہ و خور کی پتلی کا تارا جانے ہے

آگے اس متکبر کے ہم خدا خدا کیا کرتے ہیں
کب موجود خدا کو وہ مغرور خود آرا جانے ہے

عاشق سا تو سادہ کوئی اور نہ ہوگا دنیا میں
جی کے زیاں کو عشق میں اس کے اپنا وارا جانے ہے

چارہ گری بیماری دل کی رسم شہر حسن نہیں
ورنہ دلبر ناداں بھی اس درد کا چارہ جانے ہے

کیا ہی شکار فریبی پر مغرور ہے وہ صیاد بچہ
طائر اڑتے ہوا میں سارے اپنے اساریٰ جانے ہے

مہر و وفا و لطف و عنایت ایک سے واقف ان میں نہیں
اور تو سب کچھ طنز و کنایہ رمز و اشارہ جانے ہے

کیا کیا فتنے سر پر اس کے لاتا ہے معشوق اپنا
جس بے دل بے تاب و تواں کو عشق کا مارا جانے ہے

رخنوں سے دیوار چمن کے منہ کو لے ہے چھپا یعنی
ان سوراخوں کے ٹک رہنے کو سو کا نظارہ جانے ہے

تشنۂ خوں ہے اپنا کتنا میرؔ بھی ناداں تلخی کش
دم دار آب تیغ کو اس کے آب گوارا جانے ہے

Mir-Taqi-Mir-complete-Ghazal
Mir Taqi Mir

 

 

 

اشک آنکھوں میں کب نہیں آتا

اشک آنکھوں میں کب نہیں آتا
لوہو آتا ہے جب نہیں آتا

ہوش جاتا نہیں رہا لیکن
جب وہ آتا ہے تب نہیں آتا

صبر تھا ایک مونس ہجراں
سو وہ مدت سے اب نہیں آتا

دل سے رخصت ہوئی کوئی خواہش
گریہ کچھ بے سبب نہیں آتا

عشق کو حوصلہ ہے شرط ارنہ
بات کا کس کو ڈھب نہیں آتا

جی میں کیا کیا ہے اپنے اے ہمدم
پر سخن تا بلب نہیں آتا

دور بیٹھا غبار میرؔ اس سے
عشق بن یہ ادب نہیں آتا

 

قصد گر امتحان ہے پیارے

 

قصد گر امتحان ہے پیارے
اب تلک نیم جان ہے پیارے

گفتگو ریختے میں ہم سے نہ کر
یہ ہماری زبان ہے پیارے

چھوڑ جاتے ہیں دل کو تیرے پاس
یہ ہمارا نشان ہے پیارے

میر عمدن بھی کوئی مرتا ہے
جان ہے تو جہان ہے پیارے

Kya Kahun Tum Se Main Ke Kya Hai Ishq

Kya Kahun Tum Se Main Ke Kya Hai Ishq
Jaan Ka Rog Hai Bala Hai Ishq

Ishq Hi Ishq Hai Jahaan Dekho
Saare Aalam Mein Bhar Raha Hai Ishq

Ishq Maashuq Ishq Aashiq Hai
Yaani Apna Hi Mubtala Hai Ishq

Ishq Hai Tarz-O-Taur Ishq Ke Teen
Kahin Banda Kahin Khuda Hai Ishq

Kaun Maqsad Ko Ishq Bin Pohuncha
Aarzoo Ishq Wa Mudda Hai Ishq

Koi Khwaahan Nahin Mahabbat Ka
Tu Kahe Jins-E-Narawa Hai Ishq

Mir Ji Zarad Hote Jaate Hain
Kya Kahin Tum Ne Bhi Kiya Hai Ishq

 

Ibtadaae Ishq Hai Rota Hai Kya,

 

Ibtadaae Ishq Hai Rota Hai Kya,
Aage Aage Dekhiye Hota Hai Kya.

Qafile Mein Subah Ke Ek Shor Hai,
Yaani Ghaafil Ham Chale Sota Hai Kya.

Sabz Hoti Hi Nahin Yeh Sar Zamin,
Tukhm-E-Khwahish Dil Mein Tu Bota Hai Kya.

Yeh Nishaan-E-Ishq Hain Jaate Nahin,
Daagh Chhaati Ke Abas Dhota Hai Kya.

Ghairat-E-Yousaf Hai Yeh Waqt-E-Aziz,
Mir Isko Raigaan Khota Hai Kya.A

Tum Nahi Fitana-Saz Sach Sahab

 

Tum Nahi Fitana-Saz Sach Sahab

Shahar Pur-Shor is Gulam Se Hai

Koi Tujh Sa Bhi Kash Tujh Ko Mile

Mudda Hum Ko Intaqam Se Hai

Sher Mere Hain Sab Khvas Pasand

Par Mujhe Guftagu Awam Se Hai

Sahal Hai ‘Meer’ Ka Samajhana Kya

Har Sukhan Usaka Ik Maqam Se Hai

اس عہد میں الٰہی محبت کو کیا ہوا

اس عہد میں الٰہی محبت کو کیا ہوا
چھوڑا وفا کو ان نے مروت کو کیا ہوا

امیدوار وعدۂ دیدار مر چلے
آتے ہی آتے یارو قیامت کو کیا ہوا

کب تک تظلم آہ بھلا مرگ کے تئیں
کچھ پیش آیا واقعہ رحمت کو کیا ہوا

اس کے گئے پر ایسے گئے دل سے ہم نشیں
معلوم بھی ہوا نہ کہ طاقت کو کیا ہوا

بخشش نے مجھ کو ابر کرم کی کیا خجل
اے چشم جوش اشک ندامت کو کیا ہوا

جاتا ہے یار تیغ بکف غیر کی طرف
اے کشتۂ ستم تری غیرت کو کیا ہوا

تھی صعب عاشقی کی بدایت ہی میرؔ پر
کیا جانیے کہ حال نہایت کو کیا ہوا

 

اس کا خیال چشم سے شب خواب لے گیا

اس کا خیال چشم سے شب خواب لے گیا
قسمے کہ عشق جی سے مرے تاب لے گیا

کن نیندوں اب تو سوتی ہے اے چشم گریہ ناک
مژگاں تو کھول شہر کو سیلاب لے گیا

آوے جو مصطبہ میں تو سن لو کہ راہ سے
واعظ کو ایک جام مئے ناب لے گیا

نے دل رہا بجا ہے نہ صبر و حواس و ہوش
آیا جو سیل عشق سب اسباب لے گیا

میرے حضور شمع نے گریہ جو سر کیا
رویا میں اس قدر کہ مجھے آب لے گیا

احوال اس شکار زبوں کا ہے جائے رحم
جس ناتواں کو مفت نہ قصاب لے گیا

منہ کی جھلک سے یار کے بے ہوش ہو گئے
شب ہم کو میرؔ پرتو مہتاب لے گیا

باتیں ہماری یاد رہیں پھر باتیں ایسی نہ سنیے گا

باتیں ہماری یاد رہیں پھر باتیں ایسی نہ سنیے گا
پڑھتے کسو کو سنیے گا تو دیر تلک سر دھنیے گا

سعی و تلاش بہت سی رہے گی اس انداز کے کہنے کی
صحبت میں علما فضلا کی جا کر پڑھیے گنیے گا

دل کی تسلی جب کہ ہوگی گفت و شنود سے لوگوں کی
آگ پھنکے گی غم کی بدن میں اس میں جلیے بھنیے گا

گرم اشعار میرؔ درونہ داغوں سے یہ بھر دیں گے
زرد رو شہر میں پھریے گا گلیوں میں نے گل چنیے گا

مِرے سلیقے سے میری نِبھی محبّت میں

مِرے سلیقے سے میری نِبھی محبّت میں
تمام عُمر میں ناکامیوں سے کام لیا

اگرچہ گوشہ گزیں ھُوں میں شاعروں میں، میر
پہ میرے شور نے روُئے زمیں تمام لیا

 

Yaaro Muje Maaf Rakho Main Nashe Mein Hun

 

Yaaro Muje Maaf Rakho Main Nashe Mein Hun
Ab Do Tu Jaam Khali Hi Do, Main Nashe Mein Hun

Aik Qart-e Dor Main Yunhi Hi Muje Bi Do
Jame Sharab Par Na Karo, Main Nashe Mein Hun

Masti Se Barhami Hai Meri, Guftagu Ke Bech
Jo Chaho Tum Bi Muj Ko Kahu, Main Nashe Mein Hun

Ya Hathon Hath Lo Muje, Manind Jaam-e May
Ya Thori Door Sath Chalo, Main Nashe Mein Hun

Ma’azoor Hun, Jo Paon Mere Be Tarah Pare
Tu Sargaran Tu Muj Se Na Ho, Main Nashe Mein Hun

Nazak Mazaj Aap Qayamat Hain Mir Ji
Joon Shesha Mere Munh Na Lago, Main Nashe Mein Hun

 

Faqiraana Aae Sadaa Kar Chale

 

Faqiraana Aae Sadaa Kar Chale
Miyaan Khush Raho Ham Dua Kar Chale

Jo Tujh Bin Na Jeene Ko Kahte The Ham
So Is Ahd Ko Ab Wafa Kar Chale

Koi Naumidana Karte Nigah
So Tum Ham Se Munh Bhi Chhipa Kar Chale

Bahut Aarzoo Thi Gali Ki Teri
So Yaan Se Lahu Mein Naha Kar Chale

Dikhai Diye Yun Ke Bekhud Kiya
Hamen Aap Se Bhi Juda Kar Chale

Jabin Sijda Karte Hi Karte Gayi
Haq-E-Bandgi Ham Ada Kar Chale

Prastash Ki Yaan Taeen Ke Ai But Tujhe
Nazr Mein Sabhon Ki Khuda Kar Chale

Gayi Umr Dar Band-E-Fikr-E-Ghazal
So Is Fan Ko Aisa Bara Kar Chale

Kahen Kya Jo Puchhe Koi Ham Se Mir
Jahaan Mein Tum Ae The Kya Kar Chale

الٹی ہو گئیں سب تدبیریں کچھ نہ دوا نے کام کیا

 

الٹی ہو گئیں سب تدبیریں کچھ نہ دوا نے کام کیا
دیکھا اس بیماری دل نے آخر کام تمام کیا

عہد جوانی رو رو کاٹا پیری میں لیں آنکھیں موند
یعنی رات بہت تھے جاگے صبح ہوئی آرام کیا

حرف نہیں جاں بخشی میں اس کی خوبی اپنی قسمت کی
ہم سے جو پہلے کہہ بھیجا سو مرنے کا پیغام کیا

ناحق ہم مجبوروں پر یہ تہمت ہے مختاری کی
چاہتے ہیں سو آپ کریں ہیں ہم کو عبث بدنام کیا

سارے رند اوباش جہاں کے تجھ سے سجود میں رہتے ہیں
بانکے ٹیڑھے ترچھے تیکھے سب کا تجھ کو امام کیا

سرزد ہم سے بے ادبی تو وحشت میں بھی کم ہی ہوئی
کوسوں اس کی اور گئے پر سجدہ ہر ہر گام کیا

کس کا کعبہ کیسا قبلہ کون حرم ہے کیا احرام
کوچے کے اس کے باشندوں نے سب کو یہیں سے سلام کیا

شیخ جو ہے مسجد میں ننگا رات کو تھا مے خانے میں
جبہ خرقہ کرتا ٹوپی مستی میں انعام کیا

کاش اب برقعہ منہ سے اٹھا دے ورنہ پھر کیا حاصل ہے
آنکھ مندے پر ان نے گو دیدار کو اپنے عام کیا

یاں کے سپید و سیہ میں ہم کو دخل جو ہے سو اتنا ہے
رات کو رو رو صبح کیا یا دن کو جوں توں شام کیا

صبح چمن میں اس کو کہیں تکلیف ہوا لے آئی تھی
رخ سے گل کو مول لیا قامت سے سرو غلام کیا

ساعد سیمیں دونوں اس کے ہاتھ میں لا کر چھوڑ دیئے
بھولے اس کے قول و قسم پر ہائے خیال خام کیا

کام ہوئے ہیں سارے ضائع ہر ساعت کی سماجت سے
استغنا کی چوگنی ان نے جوں جوں میں ابرام کیا

ایسے آہوئے رم خوردہ کی وحشت کھونی مشکل تھی
سحر کیا اعجاز کیا جن لوگوں نے تجھ کو رام کیا

میرؔ کے دین و مذہب کو اب پوچھتے کیا ہو ان نے تو

قشقہ کھینچا دیر میں بیٹھا کب کا ترک اسلام کیا

 

آگے جمال یار کے معذور ہو گیا

 

آگے جمال یار کے معذور ہو گیا
گل اک چمن میں دیدۂ بے نور ہو گیا

اک چشم منتظر ہے کہ دیکھے ہے کب سے راہ
جوں زخم تیری دوری میں ناسور ہو گیا

قسمت تو دیکھ شیخ کو جب لہر آئی تب
دروازہ شیرہ خانے کا معمور ہو گیا

پہنچا قریب مرگ کے وہ صید ناقبول
جو تیری صید گاہ سے ٹک دور ہو گیا

دیکھا یہ ناؤ نوش کہ نیش فراق سے
سینہ تمام خانۂ زنبور ہو گیا

اس ماہ چاردہ کا چھپے عشق کیونکے آہ
اب تو تمام شہر میں مشہور ہو گیا

شاید کسو کے دل کو لگی اس گلی میں چوٹ
میری بغل میں شیشۂ دل چور ہو گیا

لاشہ مرا تسلی نہ زیر زمیں ہوا
جب تک نہ آن کر وہ سر گور ہو گیا

دیکھا جو میں نے یار تو وہ میرؔ ہی نہیں
تیرے غم فراق میں رنجور ہو گیا

Ulti Ho Ga.Iin Sab Tadbiren Kuchh Na Dava Ne Kaam Kiya

Ulti Ho Ga.Iin Sab Tadbiren Kuchh Na Dava Ne Kaam Kiya
Dekha Is Bimari-E-Dil Ne Akhir Kaam Tamam Kiya

Ahd-E-Javani Ro Ro Kaata Piiri Men Liin Ankhen Muund
Ya.Ani Raat Bahut The Jaage Sub.H Hui Aram Kiya

Harf Nahin Jan-Bakhshi Men Us Ki Khubi Apni Qismat Ki
Ham Se Jo Pahle Kah Bheja So Marne Ka Paiġham Kiya

Nahaq Ham Majburon Par Ye Tohmat Hai Mukhtari Ki
Chahte Hain So Aap Karen Hain Ham Ko Abas Badnam Kiya

Saare Rind Aubash Jahan Ke Tujh Se Sujud Men Rahte Hain
Banke Tedhe Tirchhe Tikhe Sab Ka Tujh Ko Imaam Kiya

Sarzad Ham Se Be-Adabi To Vahshat Men Bhi Kam Hi Hui
Koson Us Ki Or Ga.E Par Sajda Har Har Gaam Kiya

Kis Ka Ka.Aba Kaisa Qibla Kaun Haram Hai Kya Ehram
Kuche Ke Us Ke Bashindon Ne Sab Ko Yahin Se Salam Kiya

Shaikh Jo Hai Masjid Men Nanga Raat Ko Tha Mai-Khane Men
Jubba Khirqa Kurta Topi Masti Men In.Aam Kiya

Kaash Ab Burqa Munh Se Utha De Varna Phir Kya Hasil Hai
Aankh Munde Par Un Ne Go Didar Ko Apne Aam Kiya

Yaan Ke Sapid O Siyah Men Ham Ko Dakhl Jo Hai So Itna Hai
Raat Ko Ro Ro Sub.H Kiya Ya Din Ko Juun Tuun Shaam Kiya

Sub.H Chaman Men Us Ko Kahin Taklif-E-Hava Le Aa.I Thi
Rukh Se Gul Ko Mol Liya Qamat Se Sarv Ġhulam Kiya

Sa.Ad-E-Simin Donon Us Ke Haath Men La Kar Chhod Diye
Bhule Us Ke Qaul-O-Qasam Par Haa.E Khayal-E-Kham Kiya

Kaam Hue Hain Saare Zaa.E.A Har Saa.At Ki Samajat Se
Istiġhna Ki Chauguni Un Ne Juun Juun Main Ibram Kiya

Aise Ahu-E-Ram-Khurda Ki Vahshat Khoni Mushkil Thi
Sehr Kiya E.Ajaz Kiya Jin Logon Ne Tujh Ko Raam Kiya

‘Mir’ Ke Din-O-Maz.Hab Ko Ab Puchhte Kya Ho Un Ne To
Qashqa Khincha Dair Men Baitha Kab Ka Tark Islam Kiya

 

Dekh To Dil Ki Jaan Se Uthta Hai

 

Dekh To Dil Ki Jaan Se Uthta Hai
Ye Dhuan Sa Kahan Se Uthta Hai

Gor Kis Diljale Ki Hai Ye Falak
Shola Ik Sub.H Yaan Se Uthta Hai

Khana-E-Dil Se Zinhar Na Ja
Koi Aise Makan Se Uthta Hai

Naala Sar Khinchta Hai Jab Mera
Shor Ik Asman Se Uthta Hai

LaḌti Hai Us Ki Chashm-E-Shokh Jahan
Ek Ashob Vaan Se Uthta Hai

Sudh Le Ghar Ki Bhi Shola-E-Avaz
Duud Kuchh Ashiyan Se Uthta Hai

Baithne Kaun De Hai Phir Us Ko
Jo Tire Astan Se Uthta Hai

Yuun Uthe Aah Us Gali Se Ham
Jaise Koi Jahan Se Uthta Hai

Ishq Ik ‘Mir’ Bhari Patthar Hai
Kab Ye Tujh Na-Tavan Se Uthta Hai

About admin

I am the Owner of this Website. By profession, I am a Poet, Lyricist and Content Writer. Connect to me on Social Media.

Check Also

Bulleh-Shah-Poetry

Bulleh Shah Poetry

Bulleh Shah Poetry Baba Bulleh Shah was a Punjabi Islamic Poet and also a Sufi …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *